History of the world Series Big Socho ( Faisal Warraich ) Urdu

گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کیا ہے؟

پاکستان ویپ میں خوش آمدید! دوستو، ہم روزانہ ٹیلی ویژن، اخبارات اور سوشل میڈیا پر بہت سی خبریں دیکھتے ہیں جس میں کوئی شخص ریکارڈ بناتا ہے۔ مثال کے طور پر سب سے لمبے شخص کا ریکارڈ، سب سے لمبے بالوں کا ریکارڈ، ایک منٹ میں سب سے زیادہ تالیاں بجانے کا ریکارڈ، یا دنیا کی تیز ترین کار کا ریکارڈ، اور ہزاروں مزید ایسی خبریں پڑھنے اور ان ریکارڈز کو دیکھنے کے بعد ہولڈرز، آپ سوچ رہے ہوں گے کہ یہ ریکارڈ کیسے بنتے ہیں

گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کیا ہے؟
گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کیا ہے؟ | What is The Guinness Book of World Records? | Why is it called the Guinness Book of World Records? | What is Guinness world record? | What is the 1st Guinness world record? | Who owns the Guinness Book of World Records? | اسے گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کیوں کہا جاتا ہے؟ | گنیز ورلڈ ریکارڈ کیا ہے؟ | پہلا گنیز ورلڈ ریکارڈ کیا ہے؟ | گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کا مالک کون ہے؟

ان کی نگرانی کون کرتا ہے؟ پچھلا ریکارڈ کیا تھا، کس نے کس کا ریکارڈ توڑا، یہ سارا ڈیٹا کہاں محفوظ ہے اور اس کام کا ذمہ دار کون ہے؟ یہ تو ہم آج جانیں گے کہ گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کیا ہے؟ جہاں کہیں بھی کوئی ریکارڈ ہو وہاں گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز کا تذکرہ ضرور ہوتا ہے .گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز یا گنیز ریکارڈز ایک ایسی کمپنی ہے جو دنیا کے ہر قسم کے ریکارڈ کا ریکارڈ رکھتی ہے۔

اور گنیز ورلڈ ریکارڈ پوری دنیا میں بہت مقبول ہے اور اس کی فراہم کردہ معلومات کو قابل اعتماد سمجھا جاتا ہے۔ گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز کی تاریخ – 10 نومبر 1951 کو گنیز بریوریز سے وابستہ ہیو بیور نامی شخص آئرلینڈ میں ایک نجی تقریب میں موجود تھا۔ تقریب میں پرندوں کا شکار بھی کیا جا رہا تھا جو کہ دراصل ایک شکار پارٹی تھی۔ اسی دوران یہ بحث چھڑ گئی کہ یورپ میں سب سے تیز ترین شکار کرنے والا پرندہ کون سا ہے، اس بارے میں بہت بحث ہوئی لیکن اس سوال کا صحیح جواب کسی کو معلوم نہیں تھا۔

اور یہیں سے بیور کو اسی طرح کے سوالات کے جوابات والی کتاب کا خیال آیا بیور کے ایک دوست نے اسے دو آدمیوں سے ملوایا جو لندن میں مختلف اخبارات کے لیے حقائق تلاش کرنے والی ایجنسی چلا رہے تھے۔ بیور نے اپنا خیال ان دونوں کو تفصیل سے بتایا اور کہا کہ ایک کتاب تیار کرو جس میں دنیا کے قابل ذکر ریکارڈز کی فہرست ہو۔ یہ کتاب 27 اگست 1955 کو انگریزی میں شائع ہوئی تھی

اور اسی سال دسمبر تک یہ یونائیٹڈ کنگڈم فرینڈز میں سب سے زیادہ سیلر بن چکی تھی ، یاد رہے کہ ان دنوں نہ تو انٹرنیٹ ایجاد ہوا تھا اور نہ ہی گوگل۔ آج ہم کسی بھی قسم کی معلومات کے لیے فوراً گوگل کھولتے ہیں، یہ کتاب اس دور میں لوگوں کے لیے بہت مددگار ثابت ہوئی۔ لوگوں نے اس نئے اور انوکھے آئیڈیا کو اتنا پسند کیا کہ اگلے سال امریکا میں اس کی ستر ہزار کاپیاں فروخت ہوئیں۔ آج بھی یہ کتاب ہر سال مئی یا اکتوبر میں ایک سو سے زائد ممالک میں نئے ریکارڈ جوڑنے یا پرانے ریکارڈ تبدیل کرنے کے بعد شائع ہوتی ہے۔

گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کے مختلف ایڈیشنز کا چالیس مختلف زبانوں میں ترجمہ ہو چکا ہے۔ اور اس کے مختلف ایڈیشنز کی 147 ملین سے زیادہ کاپیاں 100 ممالک میں فروخت ہو چکی ہیں۔ ہر سال اس کتاب کے نئے ایڈیشن کی تیس لاکھ سے زیادہ کاپیاں خریدی جاتی ہیں۔ گنیز کا کیا مطلب ہے؟ دوستو، اس خیال کے بانی ایک بیئر کمپنی سے وابستہ تھے۔

گنیز کا مطلب ایک خاص قسم کی بیئر بھی ہے۔ اور چونکہ اس کتاب کا خیال انہیں ایک پارٹی میں آیا، اس لیے اس کتاب کا نام گنیز رکھا گیا۔ بدلتا ہوا دور اور گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز اگر آپ سے ہر سال ایک ہی کتاب کے مختلف ایڈیشن خریدنے کو کہا جائے تو آپ چند سالوں میں اس کتاب سے اکتا جائیں گے۔ سال 2000 کے آغاز میں گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ خریدنے والوں کی طرف سے بھی یہی ردعمل دیکھنے میں آیا 1983 میں انٹرنیٹ کی ایجاد کے بعد اس کی مقبولیت کی وجہ سے کتابوں کی فروخت میں کمی آنے لگی۔

گنیز ورلڈ ریکارڈ اب ایک کمپنی بن چکی ہے۔ بدلتے ہوئے حالات میں گنیز ورلڈ ریکارڈ نے بھی نئے طریقے اپنائے۔ جو لوگ کوئی ریکارڈ بنانا یا توڑنا چاہتے تھے انہیں گینز ریکارڈز کی جانب سے ایک مددگار کی پیشکش کی گئی جو انہیں ریکارڈ کے بارے میں معلومات فراہم کرے گا اس کے ساتھ ہی انہوں نے لوگوں کو راغب کرنے کے لیے مشہور شخصیات کو کمپنی سے جوڑنا شروع کردیا۔

گنیز ورلڈ ریکارڈ نے ایک ویب سائٹ بھی لانچ کی اور کئی ممالک میں ٹی وی شوز کا آغاز کیا، جس میں لوگ ان ریکارڈز کے بارے میں سوالات پوچھیں گے اور گینز ریکارڈز کے نمائندے جواب دیں گے کہ ریکارڈ بنانے اور توڑنے کی کوششیں بھی ٹی وی اسکرینز پر دکھائی گئیں۔ اس سب نے گنیز ورلڈ ریکارڈز میں دلچسپی کو زندہ رکھنے میں مدد کی۔ یہ کتاب ہر سال شائع ہوتی ہے،

اور وہ آفیشل یوٹیوب چینل پر بھی بہت متحرک ہیں۔ ان ریکارڈوں کا ایک آن لائن ڈیٹا بیس موجود ہے۔ آپ گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز کو مختلف سائٹس سے بک کی شکل میں آن لائن آرڈر یا ڈاؤن لوڈ بھی کر سکتے ہیں۔ کیا آپ اپنا نام گنیز بک آف ریکارڈز میں شامل کر سکتے ہیں؟ دوستو اگر آپ میں بھی ریکارڈ بنانے کی صلاحیت ہے تو تیار ہوجائیں۔ گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز میں 40,000 مختلف اقسام کے ریکارڈ موجود ہیں

جن میں سے کچھ بہت مشکل ہیں اور کچھ نسبتاً آسان۔ آپ نے شاید تیز ترین کار، سب سے طویل اور مختصر ترین شخص، اور سب سے زیادہ عمر والے شخص کے بارے میں ریکارڈز کے بارے میں سنا ہوگا۔ آئیے دیکھتے ہیں کچھ عجیب و غریب ریکارڈز ، تین منٹ میں سب سے زیادہ ہاٹ ڈاگ کھانے کا ریکارڈ، سب سے لمبی زبان کا ریکارڈ، سب سے لمبے ناخنوں کا ریکارڈ،

منہ میں دانتوں کا برش رکھ کر فٹ بال گھمانے کا ریکارڈ، ریکارڈ سب سے لمبی ٹوپی، سب سے زیادہ وقت تک چہرے پر ماسک لگانے کا ریکارڈ، برف میں بیٹھنے کا ریکارڈ اور سب سے بڑے کیک کا ریکارڈ۔ اسی طرح دنیا کی سب سے زیادہ کھڑی سڑک نیوزی لینڈ میں بنائی گئی ہے اور اس کی ڈھلوان کی شرح 34.8% ہے۔

شرح عام طور پر 7 فیصد تک ہے برج خلیفہ کے پاس دنیا کی بلند ترین عمارت ہونے کا ریکارڈ ہے۔ اس کی اونچائی 2,716.5 فٹ ہے۔ وہ سرگرمیاں جن میں کسی جانور کو نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہوتا ہے وہ ریکارڈ کی فہرست میں شامل نہیں ہیں ریکارڈ بنانے کے لیے کیا کرنا پڑتا ہے؟ دوستو، اگر آپ نے فیصلہ کیا ہے کہ آپ اپنا نام گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں شامل کرنا چاہتے ہیں،

تو آپ کو سب سے پہلے گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کی ویب سائٹ پر ایک اکاؤنٹ کے ساتھ رجسٹر کرنا ہوگا اور جمع کروائیں اور درخواست دیں۔ یہ تمام کام آن لائن ہیں۔ وہ ریکارڈ منتخب کریں جسے آپ بنانا چاہتے ہیں اور درخواست جمع کروائیں۔ اگر آپ بلا معاوضہ درخواست دیتے ہیں تو گینز بک آف ریکارڈز کو جواب دینے میں بارہ ہفتے لگیں گے

لیکن اگر آپ 800 امریکی ڈالر یا آج تک تقریباً 140,000 پاکستانی روپے جمع کراتے ہیں تو موصول ہونے کے بعد آپ کو پانچ دنوں کے اندر گنیز ریکارڈ کی طرف سے ایک ای میل موصول ہو جائے گی۔ ای میل، اگر آپ کی درخواست قبول کر لی گئی ہے، تو تیاری شروع کریں۔ آپ جو ریکارڈ بنانا یا توڑنا چاہتے ہیں اس کے بارے میں تمام معلومات حاصل کریں

اور اچھی طرح سے مشق کریں۔ ایک ریکارڈ بنانے کی کوشش کریں اور اگر آپ اس میں کامیاب ہو جاتے ہیں، تو آپ کو تمام ثبوت گنیز ریکارڈز کو بھیجنے ہوں گے تاکہ آپ باضابطہ گینز ریکارڈ ہولڈر بن سکیں اس کے علاوہ، گنیز ورلڈ ریکارڈ کے اہلکار آپ سے ذاتی طور پر مل سکتے ہیں۔ پاکستان کے کتنے ریکارڈ ہیں؟ دوستو، پاکستان کے پاس بہت سے عالمی ریکارڈ ہیں۔

ان میں سینکڑوں ہیں عبدالستار ایدھی کی فلاحی تنظیم دنیا کی سب سے بڑی ایمبولینس سروس ہے۔ پاکستان کے حسن رضا کو دنیا کے کم عمر ترین کرکٹ ٹیسٹ کھلاڑی ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ راولپنڈی ایکسپریس شعیب اختر دنیا کے تیز ترین بولر ہیں۔ پاکستان کے زیدان حامد کے پاس دنیا کے کم عمر ترین اسپورٹس کمنٹیٹر کا ریکارڈ بھی ہے۔ سب سے زیادہ قوالیاں ریکارڈ کرنے کا ریکارڈ ہمارے پسندیدہ نصرت فتح علی خان کے پاس ہے۔

پاکستان کے محمد منشا نے کم وقت میں تین چپاتیاں بنانے کا ریکارڈ اپنے نام کیا۔ دوستو، ہمارے پیارے پاکستان میں بہت ٹیلنٹ ہے اور ان ریکارڈز کی ایک لمبی فہرست ہے۔ دوستو، آپ پاکستانی مارشل آرٹ کے ماہر محمد راشد کو ضرور جانتے ہوں گے جو کراچی کے رہنے والے ہیں۔ اور اس وقت 30 گنیز ریکارڈز کے پاس ہیں۔ محمد راشد 100 گنیز ورلڈ ریکارڈ بنانے کے لیے پرعزم ہیں

اور اس خواب کو پورا کرنے کے لیے سخت محنت کر رہے ہیں۔ اس وقت ان کے پاس ایک منٹ میں سب سے زیادہ اخروٹ توڑنے کا ریکارڈ، ایک منٹ میں سب سے زیادہ سوڈا کین کو بازو سے کچلنے کا ریکارڈ، 30 سیکنڈ میں سب سے زیادہ تربوز توڑنے کا ریکارڈ اور اس جیسے کئی دوسرے ریکارڈ۔ گنیز ریکارڈز کے بارے میں دلچسپ معلومات آج، گنیز ورلڈ ریکارڈز ایک عالمی برانڈ بن چکا ہے

جس کے دفاتر لندن، جاپان، نیویارک، چین اور متحدہ عرب امارات میں ہیں۔ اس کے کل 200 سے زائد ملازمین ہیں۔ گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈز میں بھی خاص طور پر جانوروں کے لیے کچھ ریکارڈ موجود ہیں۔ جیسے سب سے بڑی شہد کی مکھی کا ریکارڈ، سب سے خطرناک چیونٹی کا ریکارڈ، سب سے بڑی بلی کا ریکارڈ، سب سے زیادہ زہریلی چھپکلی کا ریکارڈ، اور بہت کچھ۔ گنیز ورلڈ ریکارڈ میں سب سے زیادہ ریکارڈز کا ریکارڈ بھی ایک امریکی کے پاس ہے

جس میں 521 ریکارڈز ہیں اگر آپ ممالک کو دیکھیں تو متحدہ عرب امارات کے پاس سب سے زیادہ 425 ریکارڈ ہیں۔ گنیز ورلڈ ریکارڈز کوئی انعامی رقم نہیں دیتا، صرف اعزازی سرٹیفکیٹ دیتا ہے۔ تاہم، وہ مشہور ہو جاتے ہیں اور انہیں بہت سے کفیل ملتے ہیں۔ گنیز ورلڈ ریکارڈ نے کئی ممالک میں اپنے عجائب گھر بھی قائم کر رکھے ہیں

جہاں ریکارڈ سے متعلق مختلف اشیاء رکھی جاتی ہیں۔ گنیز ورلڈ ریکارڈ 2008 میں کینیڈین کمپنی جم پیٹیسن گروپ کو فروخت کیا گیا تھا دوستو ہر سال پچاس ہزار کے قریب لوگ مختلف قسم کے ریکارڈ بنانے کی کوشش کرتے ہیں جبکہ صرف ایک ہزار کے قریب کامیاب ہوتے ہیں۔ گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں صرف ان لوگوں کا تذکرہ کیا گیا ہے جنہوں نے یا تو خود کو دنیا میں متعارف کرایا۔

یا دنیا انہیں کسی نہ کسی طرح ڈھونڈتی ہے۔ مثال کے طور پر.. آپ میں ایک خاص صلاحیت ہو سکتی ہے اور آپ ریکارڈ بنانے کے قابل ہو سکتے ہیں لیکن آپ اس ٹیلنٹ سے ناواقف ہیں۔ دوستو آپ کو گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ کے بارے میں یہ معلوماتی آرٹیکل کیسا لگا؟ اور کیا آپ اپنے کسی ٹیلنٹ کی مدد سے کوئی ریکارڈ بنانا چاہتے ہیں، ہمیں کمنٹس میں بتائیں۔ شکریہ!

Watch More::جاپان کی آبادی ایک سنگین مسئلہ کیوں ہے؟

❤️❤️Watch Historical Series English Subtitles And Urdu Subtitle


Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

x

Adblock Detected

Please Turn off Your Adblocker. We respect your privacy and time. We only display relevant and good legal ads. So please cooperate with us. We are thankful to you