Planet Saturn & Uranus Urdu | نظام شمسی کی سرحدوں پر تیرتے ٹھنڈے سمندر

Planet Saturn & Uranus Urdu | نظام شمسی کی سرحدوں پر تیرتے ٹھنڈے سمندر

نائنٹین نائنٹی سیون میں انیس سو ستانوے میں، کسینی سپیس مشن کو بلین مائلز کے سفر پر لانچ کیا گیا تھا۔ ستائیس قومیتوں کے لوگ ٹوئنٹی سیون نیشنز کے ایکسپرٹس اس مشن کا حصہ تھے۔ کسینی سپیس مشن کی ٹکنالوجی اس ٹکنالوجی سے کہیں پرانی ہے جو آپ کے ہاتھوں میں سمارٹ فون کی شکل میں موجود ہے۔ آج سے تین سال پہلے اس کا مشن ختم ہونے والا تھا لیکن اس کے ذمے ایسا کام لگایا دیا گیا جس کے لیے اسے بنایا ہی نہیں گیا تھا۔

Planet Saturn & Uranus Urdu | نظام شمسی کی سرحدوں پر تیرتے ٹھنڈے سمندر

اسے اس خوبصورت ترین سیارے سیٹرن، زحل کے ان دائروں کے درمیان سے یوں گزرنا تھا کہ اس کے گرد گھومتے اربوں کھربوں پتھروں میں سے ایک بھی اس سے ٹکرا نہ سکے، پھر سیارے کی بے پناہ کشش بھی اس سپیس کرافٹ کواپنی طرف نہ کھینچ سکے اور سب سے اہم یہ کہ اس سارے پراسس کے دوران کسینی کے کیمرے اور سنسرز بالکل درست کام کرتے رہیں۔ یہ بظاہر ناممکن کام کیسے مکمن ہوا؟ اور ایسا کرنے کی ضرورت ہی کیا تھی؟ دی یونیورس سیریز کی نویں قسط میں آپ یہی سب تو دیکھیں گے ہمارے سولر سسٹم، نظام شمسی کا نگینہ یہ سیارہ زحل، پلانٹ سیٹرن ہے۔ یہاں دن گیارہ گھنٹے کا اور سال زمین کے حساب سے انتیس برس کا ہوتا ہے۔

ٹوئنیٹی نائن یئرز مریخ اور جیوپیٹر کے برعکس ہم اس سیارے کے بارے میں بہت کم جانتے ہیں۔ چند برس پہلے تک ہم یہ بالکل نہیں جانتے تھے کہ اس کہ سیارے سیٹرن جس کی سطح گیس کے گہرے بادلوں میں ڈھکی نظر آ رہی ہے کیا یہی مکمل سیارہ ہے؟ کیا پورا سیٹرن گیس ہی کا بنا ہوا ہے یا نیچے کوئی سخت چٹان بھی ہے جس کے گرد یہ بھاگتے دوڑتے بادل لپٹے ہوئے ہیں؟ کیورئیس مائنڈز کے لیے یہ بے انتہا اہم سوال تھا۔ متجسس دماغوں کی پیاس بجھانے کے لیے کسینی سپیس کرافٹ پرواز تو کر رہا تھا، تصاویر بھی اس سیارے کی بنا رہا تھا لیکن مسئلہ یہ تھا کہ یہ تصاویر ایک لاکھ کلومیٹردور سے بلکہ اس سے بھی دور سے بنائی جا رہی تھیں بھلا ایسا کیوں تھا؟ وہ اس لیے کہ آپ ذرا ان دلفریب دائروں کو ان رنگز کو دیکھئے۔

یہ دور سے دائروں میں پھیلی لکیریں دکھائی دیتی ہیں لیکن اصل میں یہ برف کے اربوں ٹکڑے ہیں جو سیٹرن کے گرد دائرے میں گھوم رہے ہیں۔ ان برف کے ذرات کی جسامت، ان کا سائز ایک معمولی ریت کے ذرے سے ایک بڑے پہاڑ جتنا ہوتا ہے۔ یہ اربوں کھربوں برفانی ٹکڑے سیٹرن کے گرد نوے ہزار کلومیٹر تک پھیلے ہوئے ہیں۔ اسی لیے سپیس کرافٹ کسینی کو بھی ہر صورت سیٹرن سے ایک لاکھ کلومیٹر سے بھی کہیں دور سے پرواز کرنا ہوتی تھی کیونکہ اگر یہ اس سے زیادہ قریب جانے کی کوشش کرتا تو ان اربوں پتھروں کا کوئی بھروسہ تو تھا نہیں ۔ ایک بھی پتھر کسینی سے ٹکرا جاتا تو اس کا کھیل ختم۔ کسینی کے اتنے پرزے ہونے تھے کہ ڈھونڈے سے اس کا نشان ملنا تھا۔

اس لیے ضروری تھا کہ اسے ان پتھروں سے بچا کر سیٹرن کے قریب سے گزارا جائے اور سیارے کی سطح کی قریب ترین تصاویر لی جائیں۔ تو اس کے لیے ایک ناقابل یقین پلان بنا۔ سیٹرن کے گرد یہ جو رنگز ہیں انھیں چار اور چار سے زیادہ کی کیٹیگریز میں تقسیم کیا جاتا ہے۔ سب سے پہلے یہ’اے‘ سب سے باہر والا رنگ، پھر بی، پھر سی اور سب سے آخر میں سیٹرن کے سب سے قریب رنگ ڈی۔ اب اس آخری رنگ ڈی اور سیٹرن کی سطح کے درمیان محض دو ہزار کلومیٹر کا ایک بہت ہی چھوٹا سا گیپ ہے۔ یہ وہ جگہ ہے کہ اگر کسی طرح کسینی سیپس کرافٹ کو یہاں سے گزار دیا جاتا اور اس دوران وہ سیٹرن کی تصاویر بھی لیتا رہتا تو ممکن تھا کہ ہم اپنے سوال کا جواب پا سکتے۔

سوال وہی کہ سیٹرن کی سطح کیسی ہے؟ کیا اس کے نیچے کوئی پتھریلی سطح کا کوئی نشان ہے ثبوت ملتا ہے یا یہ سارے کا سارا گیس ہی ہے؟ اب اس جگہ سے گزارنے کے لیے سپیس کرافٹ کی ٹیم نے ناسا ہیڈکواٹر سے تیکنیکی ضروریات پوری کیں اور سپیس کرافٹ کو اس چھوٹے سے گیپ سے گزارنے کے لیے تیار کر لیا۔ لیکن یہاں بھی ایک پوشیدہ خطرہ تھا جو سب کے ذہن میں تھا۔ وہ یہ کہ کوئی یہ نہیں جانتا تھا کہ بظاہر یہ خالی جگہ، واقعی خالی ہے یا اس میں کہیں کہیں اکا دوکا پتھر گھوم رہے ہیں۔ کیونکہ اگر سپیس کرافٹ کسینی سے اس دوران ایک بھی پتھر ٹکرا جاتا تو ظاہر ہے کسینی کا کام تمام۔ دو ارب ڈالر سے زائد کی انوسٹمنٹ کا مشن اچانک اپنی موت مر سکتا تھا۔

بیس سال تک تاریخ کے سب سے کامیاب سپیس مشن کسینی پر کام کرنے والے سائنس دان اس کی اچانک موت ہرگز ہرگز نہیں چاہتے تھے۔ اسی لیے چھبیس اپریل دو ہزارسترہ کی ایک رات ناسا کےایک کھلے ہال میں کسینی مشن کی ٹیم انگلیاں منہ میں دبائے ایک سگنل کا انتظار کر رہی تھی۔ اگر سیٹرن اور اس کے آخری رنگ کے درمیان سے کسینی کی ڈائیو کامیاب رہتی تو اسے ہیڈکوارٹر میں ایک سگنل بھیجنا تھا۔ اس سگنل کو ایک ارب انچاس کروڑکلومیٹر دور سیٹرن سے زمین تک پہنچنے میں اسی، ایٹی منٹ چاہیے تھے۔

لیکن اگر یہ ڈائیو ناکام رہتی تو یہ سگنل وصول نہیں ہونا تھا جس کا مطلب تھا کہ کسینی کسی برفیلے پتھر سے ٹکرا کر یا سیٹرن کی کشش کا شکار ہو کر اچانک مر گیا ہے۔ تو ہوا یہ کہ آدھی رات کے بعد یہ سگنل موصول ہو گیا۔ کسینی کامیابی سے سیٹرن کے بہت ہی قریب سے گزر گیا تھا، اتنے نزدیک سے کہ سیارے کے اتنا قریب کبھی کوئی نہیں گیا تھا۔ یہاں سے سیٹرن کیسا دکھائی دیتا ہے یہ بھی دیکھئے اور سیٹرن سنائی کیسا دیتا ہے یہ بھی سنئیے ایک کامیاب ڈائیو تو مکمل ہو گئی لیکن یہاں سے وہ اصل مشن شروع ہونا تھا جس کے لیے یہ ایکسپیریمنٹل ڈائیو کی گئی تھی۔

وہ اصل مشن کیا تھا؟ کامیاب ڈائیو کے بعد اب کسینی کو اگلے پانچ ماہ میں کئی بار سیٹرن کے اتنے ہی قریب سے اسی تنگ سی سپیس میں سےکئی بار گزرنا تھا۔ اور ہر بار خطرناک ڈائیو اتنی ہی خطرناک تھی جتنی پہلی بار کیونکہ کسینی کا فیول بھی بس نا ہونے کے برابر رہ گیا تھا۔ سپیس میں چونکہ فیول بہت کم چاہیے ہوتا ہے اس لیے کسینی اس جگہ سے سیٹرن کے گرد بائیس چکر لگانے میں کامیاب رہا۔ کسینی کے بیس سالہ مشن کی بدولت ہم نے بہت کچھ جانا۔ ہم نے جانا کہ سیٹرن اتنا وائیڈ ہے، اتنا چوڑا ہے کہ دس زمینیں سائیڈ بائی سائیڈ رکھی جائیں تو کہیں پھر اس کی برابری ہو سکتی ہے۔

اور یہ کہ سیٹرن اتنا بڑا ہے کہ اگر اتنا بڑا ایک تھیلا ہو تو اس میں پانچ ہزار زمینیں رکھی جا سکتی ہیں۔ اب ایک طرف سیٹرن، زحل اتنا بڑا اور دیو ہیکل ہے تو دوسری طرف اتنا ہلکا کہ اگر اس سے بڑے سائز کا ایک سمندر ہو اور سیٹرن کو اس میں پھینک دیا جائے تو یہ اس کی سطح پر ایک فٹبال کی طرح تیرنے لگے گا۔ اسی مشن کے ذریعے ہم نے جانا کہ سیٹرن تقریباً سارے کا سارا گیس ہے بہت نیچے مرکز میں ہیوی ایلیمنٹس یا پتھر اور برف کے ٹکڑے ہیں، یہ سیٹرن کا چھوٹا سا سخت کور ہے، جو لیکوئیڈ میٹیلک ہائیڈروجن گیس میں لپٹا ہوا ہے۔

اس کے اوپر سب سے موٹی تہہ ہمارے سورج ہی کی طرح ہائیڈروجن اور ہیلیم گیسز پر مشتمل ہے۔ کسینی سپیس کرافٹ وہ آخری مشن ہے جو سیٹرن کے اتنا قریب جا سکا تھا۔ ستمبر دو ہزار سترہ ہی وہ سال تھا جب کسینی مشن کو مکمل اور سپیس کرافٹ کو تباہ کیا جانا تھا۔ سو پندرہ ستمبر کو کسینی نے سیٹرن کے ایک چاند ٹائٹن سے پُش لیا اور اپنی ڈائریکشن، اپنی سمت کو تھوڑا سا تبدیل کیا۔ اب یہ سیٹرن کے اس رنگ کے درمیان سے نہیں بلکہ سیٹرن کے اندر کودنے والا تھا۔ اس کودنے اور ختم ہو جانے کے دوران کسینی کو زیادہ سے زیادہ وقت کے لیے اپنا اینٹینا مسلسل زمین کی طرف رکھنا تھا تا کہ وہ سیٹرن کی سطح کا آخری ڈیٹا بھی زمین پر بھیج سکے۔

اس کے لیے امریکہ اور آسٹریلیا میں بڑے بڑے ریسیونگ اینٹیناز کو فری کیا گیا تاکہ اس وقت وہ کسی اور مقصد کے لیے استعمال نہ ہو رہے ہوں۔ اسی دوران کسینی سپیس کرافٹ پلانٹ سیٹرن کی سطح سے چند سو کلومیٹر اوپر ایک لاکھ کلومیٹر فی گھنٹہ سے بھی زیادہ کی رفتار حاصل کر چکا تھا۔ یہ رفتار اور سیٹرن پلانٹ کا ایٹماسفیر اسے جلا کر پرزے پرزے کر دینے کے لیے کافی تھا۔ سو کسینی بیس سال کی مصروف اور کارآمد زندگی گزار کر اسی سیارے کی فضا میں ریزہ ریزہ ہو گیا جسے جاننے کا مشن اسے سونپا گیا تھا۔

اب وہ ہمیشہ ہمیشہ کے لیے سیٹرن کے ایٹماسفیر کا حصہ تھا جہاں اب کوئی اسے ڈھونڈنا بھی چاہے تو نہ ڈھونڈ سکے۔ وجہ یہ ہے کہ سیٹرن کا ایٹماسفئیر زمین کی نسبت کہیں گہرا اور طاقتور ہے۔ اتنا طاقتور ایٹماسفئیر ہے کہ وہ سنگلاخ پہاڑوں تک کو کچل کر ریت بنا سکتا ہے، تو پھر یہ چند ٹن کا کسینی سپیس کرافٹ کس کھیت کی مولی تھا۔ سو ہمارا بیس سال تک کا کیورئیس فیلو، کسینی سپیس کرافٹ اب کہیں نہیں ہے۔ سیٹرن کا ایٹماسفئیر تو پہلے بھی بہت بھاری تھا۔ لیکن اب ہمیں یہ فخر ہے کہ اس کے وزن میں دو ٹن وزن زمین سے گیا ہوا بھی شامل ہو چکا ہے۔ آخر ہمارا سپیس کرافٹ کسینی اسی کی فضا میں تو پرزے پرزے ہوا ہے۔

لیکن آپ سوچئیے بلکہ سوال کیجئے کہ اسے پرزے پرزے کرنا ہی کیوں ضروری تھا؟ خلا میں گھومتا رہتا، بے انت، لا متناہی خلا میں کون سا جگہ کی کمی تھی؟ تو دوستو آپ جانئیے کہ اسے تباہ کیا جانا بہت ضروری تھا۔ وہ اس لیے کہ ایک تو سپیس کرافٹ کا فیول صرف نوے۔۔۔ نائنٹی پاؤنڈز رہ گیا تھا۔ اس لیے خدشہ تھا کہ کہیں فیول اچانک ختم ہونے تک یہ سیٹرن کے کسی ایسے چاند پر نہ گر جائے جہاں زندگی کے امکانات موجود ہیں۔ اگر ایسا ہوتا تو انھی چاندوں پر مستقبل میں فیوچر میں جانے والے مشن متاثر ہو سکتے تھے۔ اچھا تو کیا سیٹرن پر زندگی کا کوئی امکان نہیں؟ نہیں سیٹرن پر تو ہرگز نہیں لیکن اس کے کچھ مونز پر چاند پر زندگی کا امکان ہے وہ کون سی جگہ ہے؟

یہ کسینی ہی کی ایک حیرت انگیز دریافت سیٹرن کا چاند ٹائٹن ہے۔ کسینی مشن میں شامل یورپین ایجنسی کا ہیوجنز سپیس پروب اسی چاند پر پیراشوٹ سے گرایا گیا تھا۔ اس سارے مشن سے ہمیں پتا چلا تھا کہ ٹائٹن کی سطح پر ایسے گول گول پتھر ہیں جیسے پانی کی جھیلوں یا دریاؤں میں ہزاروں سال پانی کے بہتے رہنے سے بنتے ہیں۔ ٹائٹن پر آج بھی نیلے سمندر ہیں اور بہت سی جھیلیں موجیں مار رہی ہیں۔ ہماری زمین کے بعد یہ واحد جگہ ہے جس کی سطح پر اس طرح کی جھیلیں یا سمندر پائے جاتے ہیں۔ بس فرق اتنا ہے کہ یہ سمندر اور یہ جھیلیں پانی کی نہیں لیکوئیڈ میتھین اور ایتھین کی ہیں۔

اگر کبھی اس چاند پر کوئی سپیس کالونی بنے تو اسے فیول کی کمی کبھی نہیں ہو گی کیونکہ ٹائٹن پر متھین گیس زمین کی کل دریافت گیس سے سیکڑوں گنا زیادہ ہے۔ یہ کسینی کی سب سے اہم دریافت ہے۔ لیکن یہ سب سے بڑی دریافت نہیں تھی۔ سب سے بڑی لینڈ مارک دریافت تو یہ تھی۔ کسینی نے سیٹرن کے قریب اس کا ایک برفیلا چاند، آئیسی مون انسیلیڈس دیکھا تھا ناسا اور یورپین سپیس ایجنسی کے فیوچر سپیس مشنز میں سب سے پرجوش مشنز وہ ہیں جو انھی دو مونز، ٹائٹن اور انسیلیڈس پر جا رہے ہیں۔

ٹائٹن مشن میں تینوں چیزیں شامل ہیں۔ ایک فلائی بائی سیٹلائٹ جو ٹائٹن کے گرد چکر لگائے گا پھر ایک غبارہ نما سپیس کرافٹ جو ٹائٹن کے ایٹماسفئیر پر تیرے گااور اس کے بادلوں میں سے گزرے گا۔ جبکہ تیسرا لینڈر مشن ہو گا جو ٹائٹن کی جھیلوں پر لینڈ کرے گا اور پانی پر تیرے گا یا زمین پر حرکت کرے گا۔ یہ لینڈر معلوم کرے گا کہ ان جھیلوں میں کون سے آرگینک مالیکیولز موجود ہیں حل ہیں؟ سیٹرن کے دوسرے چاند انسیلیڈس مون پربھی ایک مشن جا رہا ہے۔ یہ چاند ٹائٹن سے بہت ہی چھوٹا ہے۔

ننھا منا سا انسیلیڈس چاند لیکن یہ بہت ہی چمک دار ہے اس کے سطح پر برف کی موٹی تہہ ہے اور اس تہہ کے نیچے یوروپا ہی کی طرح گہرا سمندر ہے۔ یہ ہم اس لیے کہہ سکتے ہیں کہ اس کی سطح سے بھی پانی کے فوارے پھوٹتے ہیں کسینی سپیس مشن دیکھ اور دکھا چکا ہے۔ مائی کیورئیس فیلوز اگر ہم آپ کو بتائیں کہ سیٹرن وہ آخری سیارہ تھا جسے ہمارے آباؤ اجداد جانتے تھے تو آپ کو کیسا لگے گا؟ یہ ایک حقیقت ہے کہ سیٹرن وہ آخری سیارہ ہے جو زمین سے بغیر کسی دوربین کے نیکڈ آئی سے، خالی آنکھ سے دیکھا جا سکتا ہے اس کے بعد یہ دائرے میں گھومتا نیلا سیارہ ہے جو ابھی کل کی دریافت ہے۔

سترہ سو اکیاسی میں جب اتفاقی طور پر ایک امیچیور اسٹرانومر جو بیسیکلی ایک میوزیشن تھا ویلیم ہرشل اس نے اسے دریافت کیا وہ اسے پہلےسیارہ سمجھا ہی نہیں تھا۔اس کے خیال میں یہ ایک ستارہ یا کوئی کامٹ یا شہابیہ وغیرہ تھا لیکن جلد ہی سب ماہرین اس نتیجے پر پہنچ گئے کہ یہ ناتجربہ کار آسٹرانومر بے دھیانی میں نہ صرف نظام شمسی کا ایک نیا بڑاسیارہ دریافت کر بیٹھا ہے بلکہ کھیل ہی کھیل میں ہمارے نظام شمسی کا سائز بھی دو گنا کر گیا ہے۔ وہ یوں کہ اس سے پہلے یہی سمجھا جاتا تھا کہ سیٹرن تک سورج کی سلطنت ختم ہو جاتی ہے۔

ہمارا سولر سسٹم نظام شمسی یہیں تک ہے۔ ہمارے بڑے بھی ہزاروں سال تک یہی سمجھتے رہے۔ اور وہ کیوں نہ سمجھتے آخر یورنیس تھا ہی اتنا چھپا ہوا ۔ خلا کی تاریکی میں اتنا گم کہ کہیں سو سال میں ایک بار ہلکا سا دکھائی دیتا تھا۔ وجہ یہ تھی کہ اس پر سورج کی روشنی بہت ہی کم پڑتی ہے۔ اتنی کم کہ جتنی زمین پر پڑتی ہے اس کے ایک فیصد کے آدھے سے بھی آدھی روشنی یورینس پر پڑتی ہے۔ سورج سے اتنا دور ہونے کا اتنا نقصان تو ہو گا ناں۔ لیکن یورینس صرف اسی اعتبار سے نہیں اور بھی کئی وجوہات سے بہت ہی عجیب ہے، اتنا عجیب کہ اس جیسا اور کوئی بھی نہیں۔ ایک تو اس کی حرکت ہی دیکھئے۔

تمام سیارے اپنے ٹوپ پر یوں سپن کرتے ہیں، لیکن یہ واحد سیارہ ہے جو اپنے سائیڈز پر یوں گھومتا ہے۔ اگر تمام سیارے بہن بھائی ہوں تو یہ ان میں وہ بچہ ہو گا جو رات کو اس وقت لائٹ جلا کر سونا چاہتا ہے جب باقی سب بچےلائٹ آف کرنا چاہ رہے ہوتے ہیں۔ بس اتنا الٹ ہے سب سے۔ یہی وجہ ہے کہ اس کا نام بھی سب سے الگ طریقے سے رکھا گیا۔ سب سیارے رومن مائی تھالوجی کے دیوتاؤں کے نام پر ہیں، جبکہ یہ واحد سیارہ ہے جس کا نام یونانی مائی تھالوجی میں گاڈ آف ہیونز، آسمانوں کے دیوتا کے نام پر یورنیس رکھا گیا ہے۔

تو دوستو ہمارے سامنے یورنیس، نظام شمسی کا سب سے ٹھنڈا سیارہ گھوم رہا ہے۔ اس کا درجہ حرارت منفی دو سو تئیس،مائنس ٹو ٹونٹی تھری ڈگری سینٹی گریڈ ہوتا ہے۔ اس کے اتنا سرد ہونے کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ یہ سورج سے دور ہے اسے ایک چکر لگانے میں سورج کے گرد ایک چکر لگانے میں چراسی سال، ایٹی فور ائیرز لگتے ہیں۔ یعنی اگر آپ اس سیارے پر ہوں تو آپ کو سارے موسم دیکھنے کے لیے کم از کم اسی یا نوے سال ہونا پڑے گا زمین کے حساب سے انیس سو چھیاسی میں اسے پہلی اور اب تک آخری بار بہت قریب سے ایک لیجنڈری سپیس مشن وائجر ٹو نے دیکھا تھا اور یہ تصاویر بنائی تھیں۔

وائجر ٹو نے یورینیس کے پاس سے گزرتے ہوئے اس کے دس نئے چاند بھی دریافت کیے تھے۔ یورنیس کے کل ستائیس معلوم چاند ہیں لیکن ان میں سے یہ میرانڈا بہت بھدا سا ہے۔ اتنا بھدا کہ پورے نظام شمسی میں اتنا بدشکل چاند اور کوئی بھی نہیں۔ اسے دیکھیں تو یوں لگتا ہے کسی نے میلے ناخنوں سے مٹی میں اٹے ہوئے سخت جمے ہوئے مکھن کی کوئی گیند کھروچ کر پھینک دی ہو۔ پھر ستم یہ ہے کہ کھرچنے والے کے ناخن اتنے گہرے ہوں کہ ایک جگہ بارہ میل تک دھنس گئے ہوں۔ سائنسدانوں کا خیال ہے کہ یہ بھدے نشانات کسی دوسرے چاند یا پاس سے گزرتے کسی پتھر کے ٹکرانے سے بنے تھے۔

لیکن اب مشاہدہ ہے کہ یہ زخم دھیرے دھیرے بھر رہے ہیں۔ لیکن میرانڈا کو انسیلیڈس یا یوروپا جیسا ہموار ہونے میں ابھی کروڑوں سال لگیں گے۔ لگتے ہیں تو لگتے رہیں آپ یہ بتائیے کہ کیا آپ دبئی کے برج الخلیفہ سے نیچے کود سکتے ہیں؟ میرانڈا بھلے ایک چھوٹا سا منا سا بھدا سا چاند ہے، لیکن اس کے پاس ایک ایسی چیز ہے جس پر یہ فخر کر سکتا ہے۔ اس پر ہمارے نظام شمسی، سولر سسٹم کی سب سے بڑی کلف، چٹان وِرونا روپیز ہے۔ یہ سیدھی چٹان بیس کلومیٹر تک اونچی ہے۔ یعنی کوئی چوبیس برج الخلیفہ ایک دوسرے کے اوپر رکھیں تو کہیں وِرونا روپیز کی برابری ہوتی ہے۔

اس چٹان سے اگر کوئی چھلانگ لگائے تو اسے نیچے گرنے میں بارہ منٹ سے زیادہ کا وقت لگے گا کیونکہ میرانڈا کی گریویٹی، کشش ثقل کی قوت بہت ہی کم ہے۔ لیکن جیسے جیسے گرنے والا نیچے آئے گا اس کی رفتار زیادہ ہوتی چلی جائے گی اس لیے اگر آپ کبھی میرانڈا پر چلے جائیں تو کسی ایڈونچر کے چکر میں اس چٹان سے کودنے کی کوشش نہ کیجئے گا، کیونکہ اس کا ایٹماسفئیر ہے ہی نہیں، سو گرتے گرتے رفتار بہت زیادہ ہو جائے گی، یہاں تک کہ اگر آپ کے پاس پیراشوٹ ہے تو وہ بھی کام نہیں کرے گا۔

ہاں اگر آپ کا کوئی دوست نیچے بہت بڑا اور نرم گدا رکھ دے تو زندگی بچ سکتی ہے۔ اب ذرا اس تصوراتی ایڈونچر کو دماغ سے جھٹک دیجئے اور اس دوست کا نام بھی سوچنا چھوڑ دیجئے جو آپ کے لیے یہاں ایک گدے کا بندوبست کرے گا اور اس مجسمے کو دیکھئے۔ یہ ایک ایسے آسٹرونومر کا مجسمہ ہے جس نے نوٹ کیا کہ پلانٹ یورنیس نیوٹن کی بالکل عزت نہیں کرتا۔ پلانٹ یورنیس کی حرکت نیوٹن کے قوانین کے مطابق نہیں ہے۔

سائنس میں ایسا ممکن نہیں تھا کہ کوئی حرکت کرتا جسم نیوٹن لاز کے خلافورزی کر سکےاس کے الٹ جا سکے یا اس میں ردو بدل کر سکے لیکن ایسا تو ہو رہا تھا؟ پلانٹ یورینس مسلسل نیوٹن کے لاز کو غلط ثابت کر رہا تھا اور بتا رہا تھا کہ کوئی ہے جو نیوٹن کے قوانین کو چیلنج کر سکتا ہے۔ وہ کون تھا؟ وہ کون ہے؟ جو نیوٹن لاز سے کھیل رہا تھا؟ یہ جاننے کے لیے کل کائنات کی اگلی قسط یہاں دیکھئے اور یہاں کل کائنات کی دوسری قسط میں جانئے کہ ہمیں آسمان نیلا کیوں دکھائی دیتا ہے؟

ہم کروڑوں کی گنتی سے آگے نکل آئے ہیں ہمارے سامنے وہ سیارہ ہے جو سورج سے ایک ارب انچاس کروڑ کلومیٹر پرے، ون پوائنٹ فور نائن بلین کلومیٹرز دور ہے۔ ہم اس سپیس کرافٹ کے ساتھ ساتھ چلتے ہیں، لیکن نہیں یہ سپیس کرافٹ کسینی ایک ایسا کام کرنے والا ہے جو اس سے پہلے کبھی کسی نے نہیں کیا۔ یہ ایسا مشن پر جا رہا ہے جس کے لیے اسے تیار ہی نہیں کیا گیا لیکن اس میشن کے لیے انیس ملکوں کے بہترین دماغوں کی محنت داؤ پر لگی ہوئی ہے۔ یہ میشن کیا تھا اور کیا یہ کامیاب ہوا؟ یہ سب آپ کو دکھائیں گے لیکن کل کائنات، دا یونیورس سیریز کی نویں قسط میں جس کے لیے یہاں ٹچ کیجئے یہاں جانئے

Read More :: History of Pakistan Read In Urdu Article And Watch Play History

Part 10 :: How Neptune was discovered by Newton’s laws Urdu | نیوٹن سے چھیڑ چھاڑ کرتا بھوت سیارہ جہاں ہیروں کی بارش ہوتی ہے

▷❤▷❤ Watch Historical Series English Subtitles And Urdu Subtitles By Top20series

Leave a Comment

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: