Wo Kon Ha Series Dekho Suno Jano ( Faisal Warraich ) Urdu

Who was join of Arc Urdu | جون آف آرک کون تھی؟

Who was join of Arc Urdu | جون آف آرک کون تھی؟

ایک لڑکی تھی سولہ سترہ سال کی اسے لگتا تھا کہ اسے فرشتے نظر آتے ہیں اور خدا کا خاص پیغام پہنچاتے ہیں پہنچاتے تھے یا نہیں یہ ہم نہیں کہہ سکتے لیکن وہ ٹین ایج لڑکی اپنے اس دعوے میں اتنی کانفیڈنٹ تھی اتنی پکی تھی کہ اپنے اس دعوے کے لیے آگ میں زندہ جل مرنے پر تیار ہو گئی۔ وہ صرف انیس سال زندہ رہی لیکن اس کی زندگی کے آخری تین سال ایسے تھے جن پر فرانس آج تک فخر کرتا ہے۔ پورے فرانس میں آج بھی جابجا اس کے مجسمے نصب ہیں۔ یہ چھوٹی سی بچی تاریخ میں اتنی نامور کیوں ہے کہ صدیاں گزر گئیں لیکن لوگ اسے بھلا نہیں پائے؟ ہم آپ کو اسی لڑکی جون آف آرک کی کہانی دکھا رہے ہیں

Who was join of Arc Urdu | جون آف آرک کون تھی؟

چودہ سو بیس کی بات ہے کہ آدھے فرانس پر انگلینڈ کا قبضہ ہو چکا تھا۔ نقشہ کچھ یوں تھا کہ دریائے لوئر کے اس پار شمال میں انگلینڈ کی فوج فرانسیسی علاقوں پر قابض تھی اور دریا کے نیچے جنوب میں فرانس کی کمزور سی سلطنت ڈگمگا رہی تھی۔ دونوں حصوں کے درمیان میں صرف یہی ایک دریا تھا جس نے اپنے ناتواں کناروں پر فرانس کی آزادی کا بوجھ اٹھایا ہوا تھا۔ فرانس کا عظیم شہر پیرس بھی شمالی حصے میں تھا اور ظاہر ہے انگلینڈ ہی کے قبضے میں تھا۔ صرف یہی نہیں بلکہ فرانس کا لیڈر بھی کوئی نہیں تھا۔ کیونکہ بادشاہ حال ہی میں مر چکا تھا اور ہونے والا بادشاہ چارلز سیون تاج پوشی اور حلف لینے سے ہی محروم تھا۔ اس وقت کی روایات کے مطابق بادشاہ کو حلف لینے کے لیے شمالی فرانس کے علاقے ریمز میں جانا ہوتا تھا جہاں تاجپوشی کی رسومات ادا ہوتی تھیں۔ یہ پریکٹس زمانوں سے چلی آ رہی تھی۔

لیکن اب ظاہر شمالی طرف تو انگریز فوج قابض تھی۔ اس لیے نیا بادشاہ ہونے ولا بادشاہ چارلز سیون دریائے لووئر کے قریب ہی چنون کے شہر میں ٹھہرا ہوا تھا۔ لیکن یہ بھی ایک حقیقت تھی کہ بہت سے فرانسیسی اس بارے میں کنفیثوژن کا شکار تھے کہ ان کا اصل بادشاہ ہے کون۔ کیونکہ ایک متنازعہ معاہدے کے تحت انگلینڈ کے بادشاہ ہنری نے خود کو فرانس کا بادشاہ بھی ڈکلئیر کر دیا تھا۔ یعنی اب فرانس کی قسمت فرانسیسیوں کا مستقبل ڈانواڈول نظر آرہا تھا۔ انگلینڈ کے بادشاہ نے پورے فرانس پر قبضے کے لیے اعلان جنگ کر رکھا تھا اور وہ کسی بھی وقت دریا کو پار کر کے باقی فرانس پر بھی انگلش جھنڈے گاڑنے کو تیار تھا۔ یہ کسی بھی وقت ہو سکتا تھا۔

لیکن لیکن درمیان میں ایک تو یہ دریائے لوئر اور اس سے بھی اہم اس کے کنارے کا شہر آرلیانز تھا۔ انگلش فوج پوری کوشش کے باوجود بھی اس پر قبضہ نہیں کر سکی تھی۔ اگرچہ یہ دریا کے کنارے پر شمالی طرف تھا سارے کا سارا انگلش فوج کے گھیرے میں تھا لیکن اس کے شہریوں نے بے مثال بہادری دکھائی اور ہتھیار ڈالنے سے انکار کردیا۔ چھے ماہ کے محاصرے میں بھوک یپاس سے ان کا برا حال تھا، اسلحہ بھی ان کے پاس زیادہ نہیں تھا،ویپنز کم تھے لیکن یہاں کے شہری جی جان سے لڑ رہے تھے ہار ماننے کو تیار نہیں تھے، مگرجیت بھی تو نہیں رہے تھے نہ تو اس شہر پر آ کر جنگ رک چکی تھی، ایک سٹیل میٹ تھا۔ مگر ظاہر ہے انگلینڈ سے زیادہ پریشانی فرانسیسیوں ہی کو تھی کیونکہ آزادی تو ان کی داؤ پر لگی ہوئی تھی،

نگریزوں کی نہیں تو یہ ایک ایسی صورتحال تھی جس میں ہر طرف مایوسی تھی۔ یہ مایوسی اگر کوئی توڑ سکتا تھا تو وہ تھا ۔۔۔ ایک معجزہ ۔۔۔ یعنی وقت کی پٹاری سے کوئی ایسی چیز جواس وقت کسی کے وہم گمان میں نہ ہو۔ تو ایسا ہوا کہ چنون جہاں بادشاہ ٹھہرا ہوا تھا وہاں سے تقریباً پانچ سو کلومیٹر دور شمالی فرانس کے ایک گاؤں میں انگریز فوج اور اس کے اتحادیوں کی ایک ٹولی نے حملہ کیا۔ وہاں ایک کم عمر بچی جیوؤن اپنے ماں باپ کے ساتھ حملے سے پہلے ہی بھاگ گئی۔ اس کے گاؤں کے بہت سے لوگ مارے گئے،اور اسے اپنا بچپن کا گھر چھوڑنا پڑا۔ فرانس کی آزادی چھن جانا پھر اس کے گاؤں پر ایک خونخوار حملہ ہونا ایسی چیزیں تھی جو اس کے ننھے سے حساس دماغ میں گہری پیوست ہوگئیں۔

کچھ عرصہ نہ گزرا تھا کہ اسے تیرہ سال کی عمر میں اپنے اردگرد سے کچھ آوازیں سنائی دینے لگیں۔ اسے لگا کہ اسے مقدس ہستیاں اور فرشتے پکارتے ہیں اس سے باتیں کرتے ہیں۔ فرشتےاسے اچھی اچھی باتیں بتاتے، جیسس کے قریب رہنے کی ہدایت کرتے، وہ چرچ جاتی تو اسے سکون ملتا لیکن رفتہ رفتہ یہ ہوا کہ فرشتوں سے اس کی گفتگو مذہب سے آگے نکل کر سیاسی دائرے میں داخل ہوگئی۔ اُس دور میں یورپ میں بہت سے لوگ اور خصوص طور پر خواتین یہ دعویٰ کر دیا کرتی تھیں کہ انھیں مقدس ہستیاں دکھائی دیتی ہیں اور وہ ہستیاں ان سے باتیں کرتی ہیں یا انھوں نے فلاں اور فلاں کو خواب میں دیکھا ہے اور اس نے خواب میں اسے یہ ہدایت کی ہے۔

یہ اس دور کے لحاظ سے کوئی ایسی غیر معمولی یا نئی بات نہیں تھی۔ لیکن اس میں غیر معمولی پن اس وقت پیدا ہوا جب وہ یہ کہنے لگی کہ مقدس ہستیوں نے اسے حکم دیا ہے کہ وہ جائے اور فرانس کے ولی عہد چارلز سیون کو تخت پر بٹھائے۔ چارلز سیون وہی تھا جو چنون میں ٹھہرا ہوا تھا۔ یہ بات فرانس کے مایوس ماحول میں ایک امید کی بات تھی۔ ایک پندرہ سولہ سال کی لڑکی سے کوئی اتنی بڑی بات کی توقع نہیں کر رہا تھا، اس لیے جب اس نے ایسی باتیں کہنا شروع کیں تو وہ مشہور ہونے لگی۔ جیوؤن جو بعد میں اپنے نام کے انگلش تلف جان آف آرک کے نام سے مشہور ہوئی اپنے علاقے میں ایک منی سلیبرٹی بن چکی تھی۔

وہ دل سے سمجھتی تھی کہ فرشتے اسےفرانس کے ہونے والے بادشاہ کے بارے میں بتا رہے ہیں۔ اسی لیے وہ چارلز سیون کو کئی بار خط لکھ چکی تھی کہ وہ اسے ملاقات کے لیے بلائے۔ اس کے پاس کچھ خاص ہے اسے بتانے کے لیے چارلز سیون اور اس کے ساتھی ان لیٹرز کو خطوط کو سیریس نہیں لے رہے تھے۔ لیکن فرانس کے مستقبل کے بارے میں جیسے جیسے مایوسی بڑھتی جا رہی تھی چھوٹی سے چھوٹی امید بھی بڑا بڑا سہارا دکھائی دینے لگی تھی۔ سو ایسے ہی کسی ڈسپریٹ لمحے میں انھوں نے جان آف آرک کو کو بلانے کا فیصلہ کر لیا۔ لیکن مسئلہ یہ تھا کہ شاہی قیام گاہ میں جون جیسی ایک نوعمر بچی کو بلانے پر اختلاف تھا۔

شاہی خاندان کے قریبی لوگوں میں ان لوگوں کی خاصی تعداد تھی جو جون آف آرک کو جادوگرنی، وچ سمجھ رہے تھے۔ انھوں نے جون آف آرک کی آمد اس شرط پر قبول کی کہ چارلز سیون ایک چال چلے ایک ٹرک کھیلے۔ تخت پر وہ اپنے بجائے کسی اور کو بٹھائےاور خود عام لوگوں میں کھڑا ہو جائے۔ اگر جون جادوگرنی ہوئی اور وہ کسی بری نیت سے آئی ہوئی تو اس کے وار سے متوقع بادشاہ ہونے والا بادشاہ چالز سیون محفوظ رہے گا۔ اگر وہ واقعی کوئی مقدس ہستی ہوئی تو وہ جان جائے گی کہ بادشاہ یہاں نہیں بلکہ یہاں کھڑا ہے اور وہ اسے پہچان بھی جائے گئی اس طرح چارلز سیون بھی محفوظ رہے گا اور لڑکی کا بھید بھی کھل جائے گا کہ وہ اصل میں کیا ہے کس نیت سے آئی ہے۔

اس شرط پر جب جون کو دربار میں حاضری کا حکم ملا تو اس کی شہرت پہلی بار اپنے علاقے ’ڈومرمی‘ سے باہر نکل کر مقبوضہ فرانس اور چنون تک میں پھیلنا شروع ہو گئی۔ لوگ چہ منگوئیاں کرنے لگے کہ ایک کم سن لڑکی کو فرشتے فرانس کی فتح کی خبر سنا رہے ہیں اورخدا کا کوئی خفیہ پیغام لے کر وہ لڑکی چارلز سیون کے پاس آ رہی ہے۔ سو ایسے میں جب جان آف آرک چارلز کی قیام گاہ میں داخل ہوئی تو منظر دیکھنے والا تھا۔ ایک گھبرایا ہوا نقلی بادشاہ اپنی گھبراہٹ چھپانے کی کوشش کرتا ہوا تخت پر براجمان تھا۔ جون نے تخت کو دیکھا اور کہا ’’یہ بہت اچھا نوجوان ہے جو تحت پر بیھٹا ہے، لیکن چارلز سیون کہاں ہے؟

جب اسے جواب نہیں دیا گیا تو اس نے دربار میں چاروں طرف نظر دوڑائی، ایک ایک شخص کو غور سے دیکھا پھر ایک آدمی کی طرف بڑھی اور جھک کر آداب بجا لائی۔ یہی چارلز سیون تھا۔ جون اسے پہچان کر اپنا پہلا امتحان پاس کر گئی تھی۔ اس نے چارلز سیون سے کہا کہ اسے خدا نے پیغام دیا ہے کہ وہ جائے اور فرانس کو اس کے دشمنوں سے بچا کر خدا کے ہاتھ میں واپس لائے۔ اور یہ کہ اسے خدا نے حکم دیا ہے کہ وہ چارلز سیون کو تاریخی روایتی شہر ریمز لے جائے اور فرانس کے بادشاہ کا تاج اس کے سر پر سجا دے۔

چارلز سیون اس سب کے دوران جون سے کافی متاثر ہو چکا تھا، سو اس نے پوچھا کہ جون کے خیال میں اسے کیا کرنا چاہیے؟ جان نے اپنے لیے ایک گھوڑا، زرہ بکتر کچھ اسلحہ اور سپاہی مانگے تا کہ دریائے لوئر کے کنارے والے محصور شہر آرلیان کو آزاد کروانے جا سکے۔ بادشاہ نے یہ سب اسے کے حوالے کر دیا۔ اب صورت حال یوں تھی کہ اگر آرلیان کے گرد گھیرا ٹوٹ جاتا، تو فرانس کے لیے دریا کے پار کا راستہ کھل جانا تھا۔ اور وہ ریمز شہر جا کر بادشاہ کی تاجپوشی کر سکتے تھے۔ یہ ایک بہت بڑی امید تھی اور جان آف آرک اس امید کی وہ کرن تھی جس پر اب فرانسیسوں نے اپنی ڈوریں باندھ دی تھیں۔

دوستو، یہاں یہ بات ذہن میں رہے کہ چارلز سیون کے دربار میں اسے پہچاننے کا واقعہ تاریخ میں بہت کوٹ ہوا ہے لیکن چارلز سیون کی اس قیام گاہ کا شاہی ریکارڈ موجود نہیں لیکن یہ واقعہ جون آف آرک کے چاہنے والے اس کے معجزے کے طور پر سینہ بہ سینہ بیان کرتےآئے ہیں اور لکھنے والے لکھتے چلے آئے ہیں۔ کچھ مورخین کا بہرحال یہ خیال ہے کہ چارلز سیون اپنے تخت کے کلیم کو مضبوط کرنے اور دربار میں موجود اپنے مخالفین کو خاموش کروانے کے لیے پہلے سے یہ انتظام کر چکا تھا کہ جان آف آرک اسے پہچان لے۔ اس لیے ان کی ایک خفیہ ملاقات ون آن ون ملاقات بھی ہو چکی تھی، جس کے بارے میں عام لوگ یا دربار کے اس کے مخالفین نہیں جانتے تھے۔

سو یہ دو ورژنز آپ کے سامنے ہیں۔ جو بھی سچا ہو لیکن یہ حقیقت تھی کہ سترہ سال کی جون آف آرک فرانسیسیوں کی امید کی کرن بن کرآرلیان کو آزاد کروانے کے لیے آگے بڑھ رہی تھی۔ اس کے ساتھ ایک چھوٹی سی فورس تھی۔ اس کے اپنے ہاتھ میں اس کا اپنا ڈیزائن ک یا ہوا پرچم تھا۔ پرچم پر فرشتوں کی تصاویر تھیں اور عیسیٰ اور مریم کے نام لکھے ہوئے تھے۔ اس کے ہاتھ میں ایک ایسی تلوار تھی جو لیجنڈ کے مطابق اسے ایک گرجا گھر کے تہہ خانے سے ایک آسمانی آواز کی نشاندہی پر ملی تھی۔ تو اپریل چودہ سو انتیس میں جون آف آرک آرلیان کے قریب ایک ایسے وقت میں پہنچی جب انگریزوں کو محاصرہ کیے سات ماہ ہو چکے تھے۔

اس شہر پر انگریزوں اور فرانسسیوں میں جاری سو سالہ جنگ رکی ہوئی تھی۔ انگریز اس شہر کو فتح کر کے اگے نہیں بڑھ پا رہے تھے اورر آرلیان کے شہری انگریز فوج کا محاصرہ نہیں توڑ پا رہے تھے۔ ایسے میں جان آف آرک جب ایک چھوٹے سے لشکر کے ساتھ وہاں پہنچی تو طاقت کا توازن فرانسیسیوں کے حق میں ہو گیا۔ شہر کے تینوں اطرف میں پانی کی خندق تھی اور ایک طرف دریا تھا۔ دریا کے پل پر جنگ جاری تھی۔ جان آف آرک نے چند سواروں کے ساتھ دو مختلف اطراف میں حملہ کر کے انگریز فوج کا دھیان بٹایا اور پھر درمیانی راستے سے جیسا کہ آپ نقشے میں دیکھ رہے ہیں شہر میں داخل ہو گئی۔ یہاں پہنچ کر اس کے لشکر نے ایک ناقابل یقین کام کیا۔

Read More :: History of America Read In Urdu Article And Watch Play History

وہ یہ کہ شہر میں داخلے اور متوقع سپلائی لائن کا واحد راستہ یعنی دریا کا پل اڑا دیا۔ اب انگریز فوج لڑائی بھی جاری نہیں رکھ سکتی تھی اس لیے اسے چار و ناچار باہر محاصرے میں ہی بیٹھنا پڑا۔ اگلے دن صبح انگریز فوج نے دیکھا کہ جون آف آرک آرلیان کے قلعے کی دیوار پر کھڑی انھیں دیکھ رہی ہے۔ انگریز کمانڈر کے لیے یہ ایک بہت بڑا گیم چینجر تھا۔ جون نے آنے سے پہلے انگریز کمانڈر کو اپنے ایک مسینجر ایک قاصد کے ذریعے محاصرہ ختم کرنے کا پیغام بھیجا تھا۔ لیکن انگریز کمانڈر نے بجائے جواب دینے کے اس مسینجر کو قید کر لیا تھا۔ تو اب جون نے یہ کیا کہ ایک اور خط لکھا۔ جس میں تحریر کیا کہ اگر انگریز فوج اس کے قاصد کو اس کے مسینجر کو واپس کر دے تو وہ بدلے میں کچھ انگریز قیدی بھی رہا کر دے گی۔

لیکن انگریزوں نے قاصد واپس کرنے کے بجائے قلعے کی طرف منہ کر کے اسے گالیاں دینا شروع کر دیں اور جواب میں پیغام دیا کہ ’’جاؤ جاؤ کھیتوں میں جانور چراؤ، یہ جنگ ونگ عورتوں کے بس کی چیز نہیں ہوتی۔‘‘ انگریز جون کی طرف دیکھتے اور قہقہے لگاتے لیکن اگلے دن جب جون آف آرک نے قلعے سے باہر نکل کر انگریزوں کے کمانڈ ٹاور پر حملہ کیا تو انھی قہقہے لگانے والے کے چھکے چھوٹ گئے۔ ایک توپ کا گولہ اسی کمانڈر کے چہرے پر لگا جو کل تک جون کو پیغام دے رہا تھا کہ جاؤ جاؤ کھیتوں میں جانور چراؤ، جنگ تمہارے بس کا کھیل نہیں۔ کمانڈر کے مر جانے سے انگریز فوج کی ہمت ٹوٹ گئی اور وہ اہم ترین شہر آرلیان کو چھوڑ کر پیچھے بھاگ گئے۔

یہ فرانس کے لیے اس وقت کی ایک بڑی کامیابی تھی کیونکہ مہینوں سے جاری سٹیل میٹ ختم ہو گیا تھا اور جنگ فرانس کے حق میں پلٹنے لگی تھی۔ لیکن اس جنگ کے ساتھ ہی ایک خون بھی شامل ہو گیا۔ اور یہ خون جون آف آرک ہی کا تھا۔ اسے انگریزوں کے کمانڈ ٹاور سے ایک تیر لگا تھا جو اس کی زرہ بکتر کی درز سے ہوتا ہے اس کے کاندھے میں چھے انچ تک پیوست ہو گیا تھا زخم اتنا گہرا تھا کہ جلدی بھرتا دکھائی نہیں دیتا تھا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ انگریزوں پر حملے سے پہلے جون اپنے ساتھیوں کو کہہ چکی تھی کہ اس جنگ میں وہ زخمی ہو جائے گی۔ تاریخ میں لکھا ہے کہ اس گہرے زخم سے وہ اپنی قوت ارادی کے باعث جلد صحت یاب ہو گئی۔

کچھ کہتے ہیں کہ اس کی زرہ اس کا لوہے کا لباس بہت مضبوط تھا اس لیے تیر زیادہ گہرائی میں گیا ہی نہیں تھا۔ لیکن اس کی جلد صحب یابی اور خاص طور پر آرلیان کی فتح کو تو اس کے چاہنے والوں نے ایک اور معجزہ ہی سمجھا اور اسے فرانس میں ایک راک سٹار کی سی شہرت دلا دی۔ اب فرانس کے چارلز سیون کے لیے تاجپوشی کا راستہ کھلا تھا۔ اور یہ راستہ جان آف آرک کی بدولت کھلا تھا۔ یہ راستہ تو کھل گیا تھا لیکن جون کے لیے راستے بند ہونا شروع ہو گئے تھے۔

وہ کیسے؟ فرانسیسی شہر آرلیان میں انگریزوں کے خلاف شاندار فتح کے بعد ریمز شہر میں سترہ جولائی چودہ سو انتیس کو چارلز سیون کی تاج پوشی ہوئی۔ اس تقریب کے دوران جون آف آرک فرشتوں کی تصاویر والا اپنا پرچم اٹھائے بادشاہ کے قریب کھڑی تھی۔ یہ فرانس کے لیے ایک بہت بڑا لمحہ تھا۔ اسے اپنی آزادی واپس آتی دکھائی دے رہی تھی۔ اور یہی وہ لمحہ تھا جب لگتا تھا کہ جون آف آرک کی پروفیسز، اس کی پیشگوئیاں بھی مکمل ہو گئیں ہیں۔

اس کا پہلا اشارہ یوں ملا کہ بادشاہ چارلز سیون نے جان آف آرک کو دو انعامات تو دے دئیے۔ ایک تو یہ کہ اس کے گاؤں کا ٹیکس معاف کر دیا۔ دوسرا یہ کہ اس کے خاندان کو ایلیٹ کلاس کی طرح معزز اعلیٰ رتبہ عطا کر دیا گیا۔ لیکن جب اس نے فرانس کے اہم ترین شہر پیرس کو انگریزوں سے آزاد کروانے کے لیے فوج مانگی تو ۔۔۔ بادشاہ نے انکار کر دیا۔ صورتحال یہ تھی کہ اس وقت فرانس کا بادشاہ چارلز بھی حلف لے چکا تھا اور انگلینڈ کا بادشاہ ہنری سکس بھی خود کو فرانس اور انگلینڈ دونوں کا بادشاہ ڈکلئیر کر چکا تھا۔

اب جان آف آرک ایک اٹھارہ انیس سال کی فاتح مقدس لڑکی جنگ ہی کے ذریعے پیرس کو بھی آزاد کروانا چاہ رہی تھی، لیکن اس کے مقابلے میں فرانسیسی بادشاہ چارلز کی منصوبہ بندی اب کچھ اور تھی۔ اب وہ مذاکرات کے زریعے اس شہر کو آزاد کرانے میں زیادہ دلچسپی لے رہا تھا وجہ یہ تھی کہ فرانس کے مشرقی حصے پر برگنڈی قبائل کا قبضہ تھا یہ فرانسیسی تھے تاریخی لحاظ سے جیوگرافی لحاظ سے لیکن جنگ میں اس وقت انگلینڈ کے ساتھ مل چکے تھے۔

دوستو کیا آپ کے ذہن میں کبھی کوئی ایسا خیال آیا جو کسی پہلے سے موجود ٹیکنالوجی کو بالکل نئی شکل دے دے؟ یقیناً آیا ہو گا، ہمیں کمینٹس میں ضروربتائیں۔

Read More :: History of America Read In Urdu Article And Watch Play History

Part 2 :: Who was join of Arc Urdu | جون آف آرک کون تھی؟

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published.

x

Adblock Detected

Please Turn off Your Adblocker. We respect your privacy and time. We only display relevant and good legal ads. So please cooperate with us. We are thankful to you